جتنگا مسٹری۔۔۔کیا پرندے واقعی خودکشی کرتے ہیں۔؟

جتنگا مسٹری۔۔۔کیا پرندے واقعی خودکشی کرتے ہیں۔؟

پرندے اور خودکشی! یہ دونوں الفاظ ایک دوسرے سے کوئی مماثلت نہیں رکھتے۔ پرندے دنیا میں اللہ کی بنائی ہوئی معصوم اور خوبصورت مخلوق ہیں لیکن یہ مخلوق کبھی کبھی غیر فطری انداز اختیار کرتی ہے۔ پرندے خودکشی کیوں کرتے ہیں؟ کوئی نہیں جانتا۔ یہ ایک مسٹری ہے اور کسی کو نہیں پتا کہ اصل میں کیا ہوتا ہے۔ کیا پرندے واقعی خودکشی کرتے ہیں ؟ کیا ان کو قتل کیا جاتا ہے یا یہ قدرتی موت ہوتی ہے؟
جتنگا، آسام میں ایک پراسرار جگہ ہے جہاں ہر سال پرندوں کی ایک بڑی تعداد ہر سال مرتی ہے۔ یہ ایک مسحور کن خوبصورتی کی حامل جگہ ہے جو انڈیاکے شمال مشرقی حصے میں واقع ہے۔ لیکن اس علاقے کی خوبصورتی نے نہیں بلکہ یہاں پر پرندوں کی خودکشی کرنے کے واقعات نے اس علاقے میں لوگوں کی دلچسپی بڑھا دی ہے۔
پرندوں کی خودکشی کرنے کے واقعات مون سون کے موسم کے اختتامی دنوں میں ہوتے ہیں جب علاقہ دھند اور آبی بخارات کی لپیٹ میں ہوتاہے ایسے میں بارش کے قطرے سونے پر سہاگہ کاکام کرتے ہیں۔ تحقیقات کے مطابق ستمبر سے نومبر کے دوران شام سات بجے سے رات دس بجے تک کے وقت کے دوران Jatinga Phenomenon یا جتنگا کا عمل یا پرندوں کی خودکشی کا عمل بہت زیادہ ہوتا ہے۔
ان دھند بھری راتوں میں پرندے اس جگہ پر بالکل inactive حالت میں ہوتے ہیں اور اگر ان کو پکڑا جائے تو وہ بچاؤ میں اڑنے کی کوشش نہیں کرتے جیسے وہ نیم مردہ ہوں۔ شاید اس کی وجہ اس علاقے کا مخصوص موسم ہو۔ پرندوں کی سینکڑوں اقسام یہاں مردہ پائی جا چکی ہیں جن میں سے کئی نایاب اقسام بھی شامل ہیں۔ جیسے Pond Heron, Kingfishers, Tiger Bittern, Black Bittern, Little Egret etc.کچھ تحقیقات کے بعد یہ بات پتہ چلی کہ جتنگا کے عمل اور پرندوں کے افزائش نسل کے موسم کے درمیان کچھ تعلق موجود ہے۔ باقی تحقیقات اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ موسلادھار بارشیں، سیلاب، اور اسی طرح کے عوامل کی وجہ سے پرندے جتنگا کے علاقے کی طرف ہجرت کرتے ہیں۔ دراصل یہ علاقہ پرندوں کی ہجرت کرنے کے راستے کے درمیان واقع ہے۔ اور جتنگا عمل کے وقع پزیر ہونے میں سیلاب اور بارشیں کسی طرح اپنا کردار ادا کرتی ہیں۔ یہ بات بھی نوٹ کی گئی ہے کہ 1988 میں جب وسیع سیلاب آئے تب جتنگا میں پرندوں کی نسبتاً زیادہ تعداد موجود تھی۔
جتنگا عمل کی پراسراریت کو سمجھنے اور حل کرنے کے لئے کئی کوششیں ہو چکی ہیں، لیکن ابھی تک کوئی ایسہ نتیجہ نہیں نکالا جا سکا جس کی بنیاد پر اس معاملے کی وضاحت کی جاسکے۔ تاہم یہ کہا جاتا ہے کہ عمومی تاثر کے برخلاف پرندے شاید خودکشی نہیں کرتے بلکہ وہ آندھی، اور دھند میں پھنس کر اپنی راہ سے بھٹک جاتے ہیں اور گاؤں کی روشنیوں کی متوجہ ہوجاتے ہیں اور اس تک پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایسی کوشش میں وہ درختوں کی شاخوں اور دوسری چیزوں سے ٹکرا کر زخمی ہوجاتے ہیں اور اس وجہ سے ان کی موت واقع ہو جاتی ہے۔
تحقیقات سے یہ بات بھی پتا چلی ہے کہ تقریباً 44 اقسام کے پرندے روشنی کی طرف متوجہ ہوتے ہیں مزید یہ کہ پرندے پورے جتنگا کے علاقے کی طرف متوجہ نہیں ہوتے بلکہ یہ ایک مخصوص ایریا ہے جو 1۔5 کلومیٹر لمبا اور 200 میٹر چوڑا ہے۔ یہ پرندے نارتھ کی طرف سے آتے ہیں اور زیادہ تر مقامی ہوتے ہیں۔ وہ پرندے جو دور دراز کے علاقوں سے ہجرت کرکے آتے ہیں وہ اس علاقے کی روشنی سے متاثر نہیں ہوتے۔
وجہ جو بھی ہو، جتنگا عمل بہت پراسرار ہے اور پرندوں کو پسند کرنے والے لوگوں کے لئے بہت دلچسپی کا حامل بھی۔ لیکن یہ سوال کہ ایسا کیوں ہوتا ہے ؟ابھی تک باقی ہے۔ کیا پرندے واقعی خودکشی کرتے ہیں یا انہیں گاؤں والے قتل کر دیتے ہیں؟ پرندے دھند بھری راتوں کو کیوں بے جان اور نیم مردہ سے ہو جاتے ہیں۔ ؟
کیا آپ میں سے کسی کو اس بارے میں کچھ معلوم ہے۔؟

Advertisements

2 comments on “جتنگا مسٹری۔۔۔کیا پرندے واقعی خودکشی کرتے ہیں۔؟

  1. نہیں بھئ میں جتنگا کے بارے میں کچھ نہیں جانتا ھوں جتنگا کی جسا مت کے بارے میں لکھتیں تو شاید کسی پرندے کا ملتا جلتا تصور بن جاتا-البتہ سائمن مچھلی کی ڈاکو مینٹری دیکھی ھے -جو پیدائش کے بعد ھزاروں میل دُور سمندر میں چلی جاتی ھیں-لیکن انڈے دینے کیلئے لوٹ کر پھر اُسی پیدائشی جگہ آجاتیں ھیں انڈے دینے کے بعد فورا” ھی مرجاتی ھیں -انکی تعداد ھزاروں میں ھوتی ھے قُرآن میں اسی لۓ کائنات کی اشیاء پر غوروفکر کرنےکی تلقین کی ھے -شُکریہ

  2. سائمن مچھلی کے بابت معلومات میرے لئے نئی ہیں۔ آپ کا بہت شکریہ کہ آپ نے فیڈ بیک دی اور میری بھی معلومات میں اضافہ ہوا۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s