تصویر کے رخ

زیادہ تر لوگوں نے تصویر کے دوسرا رخ دیکھنے والی کہانی سنی ہوگی یا پھر پڑھی ہوگی۔ یہاں میرا مقصد پرانی اور پہلے سے جانی بوجھی ہوئی بات کو دہرانا نہیں ہے بلکہ اس پیغام کو سمجھنا ہے جو اس مثال سے سامنے آتا ہے یعنی معاملے کے صرف ایک پہلو کو دیکھ کر رائے نہیں بنانی چاہئے کہ یہ سچائی اور انصاف کے خلاف ہے۔

یہاں میرے سامنے یہ سوال ہے کہ "آیا ہم کسی معاملے پہ رائے بنانے سے پہلے کیا تصویر کے تمام پہلوؤں کو اچھی طرح سے دیکھ لیتے ہیں۔”

مجھے معلوم ہے کہ اگر یہ سوال میں آپ کے سامنے رکھوں تو کیا جواب آئے گا۔ اور یہ جواب مجھے پہلے سے معلوم ہے اور پھر شاید مجھے بھی تبصرے بند کرنے پڑیں۔

دوسروں کی رائے جانچنے کا مجھے کوئی حق نہیں۔ اگر کسی کی رائے جانچنے اور اس کا تجزیہ کرنے کا میرے پاس حق ہے تو وہ میری اپنی رائے ہے۔ اس لئے کسی سے بھی یہ سوال پوچھنے سے پہلے یہ سوال مجھے خود سے پوچھنا پڑے گا۔ اور میرا جواب یہ رہا۔

"ہاں میں تصویر کے دونوں رخ دیکھتی ہوں۔”

اوہ۔۔۔ میرا جواب بھی آپ سب کے متوقع جواب سے مختلف نہیں ہے۔ تو کیا اپنی رائے کے لئے بھی مجھے تبصرے بند کرنے پڑیں گے۔

میں جانتی ہوں کہ یہ صرف کہنے اور لکھنے کی بات ہے۔ نرم ترین الفاظ میں میری غلط فہمی یا چاہیں تو آپ اسے میری خوش فہمی کہہ لیں۔ کیونکہ تصویر کے تمام پہلوؤں پہ نظر رکھنے والی خصوصیت میرے اندر نہیں پائی جاتی، اگرچہ میرا خیال یہی ہے کہ پائی جاتی ہے۔

لیکن میں ایسا کیوں سمجھ رہی ہوں۔ کیا یہ اچھی بات نہیں کہ سب کی طرح میں بھی تصویر کے تمام رخ دیکھ رہی ہوں۔ یعنی ہم سب ہی انصاف اور سچائی کے تقاضے پورے کرنے کے بعد کسی معاملے پہ رائے بناتے ہیں۔

ایک منٹ ٹھہریں۔

آج اخبار میں ایک خبر پڑھی۔ "شوہر کے بد زبانی کرنے پہ بیوی کو گلا گھونٹ کے ہلاک کر دیا۔”

پڑھ کے افسوس ہوا۔ افسوس ہونا ایک فطری احساس ہے۔ مجھے زیادہ درد اس لئے بھی ہوا کہ تشدد کا نشانہ بننے والی کا تعلق میری صنف سے تھا۔ یہیں سے میری انصاف پسندی پہ پہلی ضرب لگتی ہے۔ خبر کی تفصیلات میں وہ الفاظ موجود نہیں تھے جن کی وجہ سے شوہر نے غصہ کیا۔ اس لئے یہ طے کرنا میرے لئے ناممکن تھا کہ کہے جانے والے الفاط واقعی طیش دلانے والے تھے یا ان میں ضرر کی مقدار کم تھی۔ گویا تصویر کا ایک رخ نظروں سے اوجھل رہا۔ ایسے میں، میں یہ یقین تو کر سکتی ہوں کہ قتل ہوا ہے لیکن وجہ قتل کیا رہی ہوگی اس کا حتمی فیصلہ کرنا میرے لئے نا ممکن ہے۔ ہو سکتا ہے بیوی واقعی بدزبان ہی ہو، لیکن یہ بھی ہو سکتا ہے کہ وہ نہ ہو۔۔۔

وقت کرتا ہے پرورش برسوں
حادثہ یکدم نہیں ہوتا

تو پھر کیا یہ قتل وقت اشتعال کا نتیجہ ہے یا کسی پرانی چلتی لڑائی ناراضگیوں یا کسی اور وجہ سے۔۔۔۔ میں جائے وقوعہ پہ موجود نہیں تھی۔ میں کبھی یہ نہیں جان سکتی کہ معاملے کی اصل وجہ کیا تھی۔ مجھ تک تفصیلات کسی دوسرے شخص کی آنکھ اور کانوں کے زریعے سے پہنچی ہیں۔ جس نے یہ واقعہ دیکھ کر اور اپنی سمجھ بوجھ کے مطابق اس کی تشریح اور وضاحت کرکے اس قتل کو بدزبانی کا شاخسانہ قرار دے دیا۔ اب اس شخص نے تصویر کے کتنے رخ دیکھے یہ جانے بغیر اس بات پہ پورا اور آنکھیں بند کرکے یقین کر لینا مشکل ہے۔

لیکن یہ اخباری خبر ہے اور اخبار میں سب سچ شائع ہوتا ہے۔ اور اگر نہ بھی ہو تو کیا فرق پڑتا ہے۔۔ ہمارے ڈسکس کرنے کے لئے چٹخارے دار مواد تو مل جاتا ہے۔ مرد کہیں گے کہ عورتیں ہوتی ہی بدزبان ہیں، اپنی اسی زبان کی وجہ سے تو زیادہ تر دوزخ میں جائیں گی۔ اور عورتیں کہیں گی کیا ہم مرد کے ظلم و ستم سہنے کے لئے ہی پیدا ہوئی ہیں۔ ہمارے ملک میں عورتوں کو بھیڑ بکری سمجھا جاتا ہے۔ جہاں اپنے حق کے لئے آواز اٹھائی وہیں ہمارا گلہ دبا دیا جاتا ہے۔ اور میں بھی اس ڈسکشن کا کہیں نہ کہیں حصہ بننے والی ہوں۔ تو کیا میں جو تصویر کے تمام رخ دیکھنے کی دعوے دار ہوں، اپنے دعوے میں سچی ہوں۔؟

آپ خود ہی فیصلہ کریں۔

 
ملتی جلتی تحریر: صحیح سبق

Advertisements

2 comments on “تصویر کے رخ

  1. پنگ بیک: تصویر کے رخ | Tea Break

  2. بہت خوب کہا آپ نے، ہم کہتے تو ہیں کہ ہم حقیقت پسند ہیں تصویر کے سب رخ جانچتے ہیں پرکھتے ہیں لیکن لیکن لیکن ایسا ہوتا نہیں ہے۔ کہیں نا کہیں ہم ڈنڈی مار دیتے ہیں جب انصاف کا ترازو ہمارے ہاتھ میں ہوتا ہے چاہے وہ اظہار رائے کے لیئے کیوں نا ہو ہم اس میں کہیں نا کہیں کسی ایک سمت میں وزن زیادہ کر دیتے ہیں اور اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ ہم پورا انصاف نہیں کر سکتے کہیں نا کہیں ہمارے اپنے اندر چھپا ہوا انسان ہمیں ایسا کرنے سے روک دیتا ہے، ورغلا دیتا ہے کسی ایک سمت میں جھکا دیتا ہے۔ کیوں کہ ہم انسان ہیں خطاء کر ہی جاتے ہیں۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s