کاجل کوٹھا از بابا محمد یحییٰ خان

کاجل کوٹھا از بابا محمد یحییٰ خان

لگ بھگ ساڑھے نو سو سے زیادہ صفحات پہ لکھی گئی یہ ضخیم کتاب بابا محمد یحیٰی خان کی لکھی ہوئی "پیا رنگ کالا” کا دوسرا حصہ ہے۔

جن لوگوں نے اشفاق احمد کی کتابیں پڑھی ہوں گی وہ یقیناً ان میں موجود بابوں سے واقف ہوں گے۔ بابا محمد یحییٰ خان کے تعارف کے لئے بس اتنا ہی کہ یہ اشفاق احمد کے بابوں میں سے ایک ہیں۔

درویشانہ زندگی کا احاطہ کرتی ہوئی اس کتاب کے بارے میں فیصلہ کرنا مشکل ہے کہ یہ ناول ہے یا آپ بیتی۔۔۔ درویشی کی راہ پر چلتے ہوئے جن محیر العقول واقعات سے بابا یحییٰ کا واسطہ پڑا ان کی تفصیل اس کتاب میں درج ہے۔ پڑھنے والا اپنے آپ کو ایک نئی دنیا میں موجود پاتا ہے جہاں کبھی اس کی ملاقات زیر زمین بسنے والے بونوں سے ہوتی ہے اور کہیں جنات اور انسان کے ملاپ سے جود میں آنے والی انسانی مخلوق سے۔۔۔ اور کہیں ایسی طوائفوں سے جن کی دعائیں بارگاہ الٰہی سے خالی نہیں لوٹتیں۔۔

جگہ جگہ حکمت، دانائی اور راز کی باتیں اس کتاب میں بکھری ہوئی ہیں۔۔ ہر کوئی اپنی بساط بھر موتی اکھٹے کر سکتا ہے۔

بابا صاحب کہتے ہیں کہ گندہ کرنا مشکل نہیں جتنا پاک صاف کرنا ہوتا ہے۔ یہ کتاب اسی صفائی کی داستان ہے۔

ملتی جلتی تحریر: لا دینیت

Advertisements

12 comments on “کاجل کوٹھا از بابا محمد یحییٰ خان

  1. پنگ بیک: کاجل کوٹھا از بابا محمد یحییٰ خان | Tea Break

  2. مشکور ہونگا اگر آپ یہ واضح کردیں کہ یہ بات

    "جن لوگوں نے اشفاق احمد کی کتابیں پڑھی ہوں گی وہ یقیناً ان میں موجود بابوں سے واقف ہوں گے۔ بابا محمد یحییٰ خان کے تعارف کے لئے بس اتنا ہی کہ یہ اشفاق احمد کے بابوں میں سے ایک ہیں۔”

    آپ نے کس کتاب یا بات سے اخذ کی-
    بہت شکریہ

    اور ہاں آج کل بہت کم لکھ رہی ہیں جبکہ ہمیں اپ کی تحریروں کا انتظار رہتا ہے-

    • جنہوں نے بابا صاحب کی کتابوں سے میرا تعارف کرایا تھا انہوں نے یہ بات مجھے بتائی تھی۔۔ اب انہیں کس طرح یہ معلوم ہوئی اس کا میں کچھ کہہ نہیں سکتی۔

      جی ہاں پچھلے دنوں کچھ کم لکھنا ہوا۔ امید ہے اب تسلسل رہے گا۔ تشریف آوری کے لئے شکریہ۔

  3. پیا رنگ کالا ایک اچھی کتاب ہے لیکن کچھ عقل سے بعید وقعات اسے حقیقیت سے زیادہ ناول کی شکل دے دیتے ہیں ۔ دوسرا اس کتاب ککی قیمت بہت زیادہ رکھی گئی ہے جو قارئیں کی حوصلہ شکنی کا باعث ہے

    • جی واقعات میں افسانوی انداز زیادہ ہے۔ اس کتاب کی قیمت زیادہ ہونے کی شکایت تو اکثر لوگوں کو ہے۔

  4. بابا محمد یحیی خان تو خود کو اشفاق احمد کا مرید بتاتے ہیں۔ ان کو بابا کہتے ہیں آپ نے الٹ کہہ ڈالا۔ یا میری سمجھ میں نہیں آیا یہ؟ اشفاق احمد کی پنجابی کی تعریف کرتے ہیں، ان کے ساتھ قربت کے حالات سناتے ہیں، استانی جی یعنی بانو قدسیہ کا ذکر بھی آتا ہے، کتاب کا انتساب الف اور ب یعنی اشفاق احمد اور بانو قدسیہ کے نام ہے۔ آپ نے کیسے اس کے الٹ سمجھ لیا؟

    • شاید کچھ سمجھنے میں ہی غلطی ہوئی ہے۔۔ یہ غلط فہمی مجھے کیسے ہوئی اس کا جواب میں نے ابھی ابھی دیا ہے ایک دوسرے تبصرے پہ۔

      بہرحال اصلاح کے لئے شکریہ۔


  5. اسلام علیکم۔ بات یہ ہے جناب اشفاق احمد اشفاق، شہاب الدین، ممتاز مفتی اور اب بابا محمد یحیٰ خان صاحب یہ ایک گروپ کے بندے ہیں۔ پہلے تین لوگوں کے ایک ہی بابا جی تھے بابا جی نور والے جن کا دھرم پورہ میاں میر جی دربار شریف انفنٹری روڈ پہ ڈیرہ تھا۔ وہ شاید انڈیا سے حجرت کر کے آئے تھے۔
    آپ اشفاق صاحب، شہاب الدین اور ممتاز مفتی کی کتابیں پڑہیں گے تو اس میں بھی آپ کو اس طرح کی محیرالعقول باتیں کثرت سے ملیں گی۔ یہ سب بہت روحانی اور اچھے لوگ ہیں۔ شہاب الدین کی کتاب سے باب "چھوٹا منہ بڑی بات پڑھ لیں اس میں بھی اس طرح کے واقعات ہیں۔
    بابا محمد یحیٰ خان کی اور بھی کتامیں ہیں جن میں کاجل کوٹھا، پیا رنگ کالا اور بھی ہیں۔
    میں اس سلسلے میں جلد ہی اپنا بلاگ بھی سٹارت کر رہا ہوں انشا اللہ۔ دعا کیجے گا۔ شکریہ

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s